Bayans
Naat
Sheets
Store
Live

لباس کی سنتیں
صاف کپڑے پہنیں
22nd November, 2020

Click for English
Download Audio

Comments

مومن کی خوبی
حضرت ابن عمرؓ سے مروی ایک حدیث ہے جس کا مفہوم ایسا ہے کہ اللہ سبحانہ تعالیٰ نے مومن کے اندر کس قدر خوبیاں رکھی ہیں۔ ظاہر ہے جب انسان مومن ہو، تو خوبیوں سے بھرا ہوگا ۔ ایک سے ایک بھڑ کر اُس کے اندر خوبی ہوتی ہے۔ تو اُن تمام خوبیوں میں سے اللہ سبحانہ تعالیٰ کو ایک خوبی بہت پسند ہے۔ بتائیں وہ کتنی بڑی چیز ہو گی جو تمام خوبیوں میں سے اللہ کو پسند ہوگی۔ اس حدیث کے اندر اللہ کے نبیﷺ نے وہ خوبی بیان فرمائی ہے ۔ حضرت ابن عمرؓ ارشاد فرماتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا کہ اللہ تعالیٰ کے نزدیک مومن کے تمام خوبیوں میں ایک خوبی بہت پسند ہے اور وہ کیا ہے؟ لباس کا ستھرا رکھنا، یعنی صاف ستھرا رکھنا اور کم پر راضی ہونا۔ ماشاءاللہ!یہ آپ ﷺ کی سنت ہے۔
لباس کی ہمارے ایمان ، ہمارے دین اور ہماری آخرت کے ساتھ بہت اہمیت ہے ۔ یہ معمولی چیز نہیں ہے کہ بھئی کہ جو آیا آدمی پہن لے۔ اللہ کے نبی ﷺ نے کیا کیا چیزیں اپنی سنت کے ذریعے الحمدللہ! ہمیں بتائی ہیں۔ سنت کے ایسے عمل ہیں جو انسان کو سیدھا جنت میں لے جاتے ہیں اور ظاہر ہے جو چیز اللہ کوپسند ہے وہ جنت میں لے کےہی جائے گی۔
مومن کی شان تو یہ نہیں ہے کہ لباس جو چاہے آدمی پہن لے۔ مومن کی شان تو یہ ہے کہ اُس کا انتخاب ، اُس کی پسند بس وہی ہو جو اُس کے پیاری نبی ﷺ کی پسند ہے۔ آپﷺ کی پسند تھی کہ آدمی کو لباس صاف ستھرا رکھنا چاہیے ۔
اب یہ کتنی پیاری بات ہے کہ ہر قسم کا انسان ہوتا ہے۔ امیر بھی ہے غریب بھی ہے۔ کروڑ پتی بھی ہے، بڑے بڑے امیر بھی ہیں اور غریب بھی ہیں۔یہ بات نہیں ہےکہ کوئی امیر لباس کی وجہ سےکسی غریب سے آگے پڑھ جائے گا۔اللہ تعالیٰ کے نبیﷺ نے ایسا خیال رکھا ہے۔ فرمایا لباس کا صاف ؛ تو یہ تو سب کرسکتے ہیں۔ غریب سے غریب بھی اپنے لباس کو صاف رکھ سکتا ہے۔ غربت کو دکھانے کے لیے گندہ لباس نہ پہنو یہ بڑی محرومی ہے۔ اللہ کے نبیؐ نے یہ معیار دیا ہے کہ صاف اور سُتھرا لباس ہو۔ بھئی پانی اور صابن ہر ایک کے گھر میں ہے۔ اگر مشین نہیں ہے تو ہاتھ تو ہیں۔ ہر تیسرے دن انسان لباس کو بدل لے۔ اور جہاں پسینہ ہو تو آدمی اور جلدی بدل سکتا ہے۔ ورنہ چاہے تو ہفتے میں دو دفع انسان لباس کو بدل لے۔
صاف لباس سب کے لیے اہم ہے
آگے دیکھیں کتنی پیاری بات ہےکہ کم پر راضی ہو۔ یعنی ضروری نہیں ہے کہ قیمتی لباس ہو۔ یہ بات نہیں ہے کہ جتنا قیمتی لباس ہو گا تو اللہ اس کواتنا پسند فرمائیں گے ، جتنا مہنگا ہو گا اللہ اس کو اتنا پسند فرمائیں گے۔ ایسے تو پھر امیر آگے نکل گئے دولتمندآگے نکل گئے لیکن نہیں ، اللہ کے نبی ﷺ نے غریبوں کو پسند فرمایا ہے۔
یہ عورتوں اور مردوں دونوں کے لیے ہے۔ ہمارے عورتوں میں بڑا مقابلہ ہو جاتا ہے نہ اس چیز میں۔ کسی مجلس میں نہیں جاتیں کہ میرا لباس اچھا نہیں ہےتو لوگ کیا کہیں گے۔ عجیب سوچ ہے ہماری اور بالکل ایسا نہیں ہے ۔ الحمدللہ اللہ تعالیٰ نے جو استطاعت دی ہے اتنی استطاعت کا لباس آپ پہن لیں۔ صاف ہو ، بو نہ آرہی ہو، نمک ، مرچ اور کھانوں کے دبے نہ لگے ہوں ۔ فضول چیزوں کے دبے لباس پر لگے نہ ہوں اور قیمت کی کوئی بات نہیں۔ فرمایا کم پرراضی ہو۔ اگر اتنی حیثیت ہے آدمی کی تو الحمدللہ ۔ یہ بھی نہیں کہ آدمی کی حیثیت ہے کہ دس پونڈ کا لباس پہن سکتا ہے تو دو پونڈ کا پہن لے۔ نہیں اُس کو دس پونڈ کا ہی پہننا چاہیے۔ تو وجہ یہ ہے غریب کے پاس تین پونڈ ہیں تو تین پونڈ کا پہنے گا لیکن اجر میں برابر ہے اُس کے۔ وہ اس چیز کو پسند فرما رہا ہے کہ صاف بھی رکھا ہے اُس نے اور وہ راضی بھی ہے اِس چیز سےکہ الحمد للہ میں اپنے لباس میں خوش ہوں کوئ پسند کرے نہ کرے کیونکہ اللہ کے پیارے حبیب ﷺ نے اس کو پسند فرمایا یے۔ سبحان اللہ لباس کا سُتھرا ہونا بہت بڑی چیز ہے۔ ایک اور حدیث میں ہے کہ اللہ کے نبیؐ میلے اور گندے کپڑوں کو مکروہ اور ناپسند فرماتے تھے۔ ہمارے یہاں اکثر یہ ہےکہ جب ہم باہر نکلتے ہیں تو ضرور اچھا لباس پہنتے ہیں لیکن گھر کے اندر گندے مندے۔ خواتین میں خواص طور پر باہر میں اور گھر میں بہت فرق ہو گا۔ ظاہر ہے کہ جب آدمی کوئی ایسا کام کرے گا جیسے کھانا ہے باورچی خانے کا کام ہے صفائی کرنی ہے تو ان کاموں کے لیےدوسرا لباس پہن لے۔ اوپر کوئی ایسی چیز پہن لے جس سے لباس خراب نہ ہو۔ خواص طور پر خواتین جو گھر کا کام کرتی ہیں۔ اُن کو اپنے لباسوں کو صاف سُتھرا رکھنا چاہیے کیوں؟ اس لیے کہ اللہ سبحانہ و تعالیٰ نے فرما دیا کہ مجھے پسند ہے تمام خوبیوں میں یہ تیرے خوبی۔
اب مومن کی یہ خوبی بھی ہے کہ وہ تہجد پہ بھی اٹھتا ہے نمازیں بھی پڑھتا ہے قرآن بھی پڑھتا ہے تلاوت بھی کرتا ہے۔ کتنی بڑی خوبی ہے لیکن اللہ تعالیٰ کہتا ہے کہ مجھے پسند یہ ہے کہ لباس بھی اچھا ہو بےشک سستا ہو لیکن صاف سُتھرا ہو۔ ورنہ اللہ کے نبیؐ نے فرمایا کہ گندے کپڑوں کو مکروہ اور ناپسند جانتا ہوں۔
درود شریف پڑھیں گے ،آپ بیٹھ کے اللہ کی تسبیح کریں گے ، اللہ کا ذکر کریں گے تو لباس اگر صحیح نہ ہو تو بھئی معاملہ صحیح نہیں ہے۔ اللہ پاک نبی کریم ﷺ کی سنتوں کو عطاء فرمائے اور اُن پہ چلنے کی پوری توفیق فرمائے اور اس کے ساتھ ساتھ سچی محبت عطا فرما دے۔ سنتوں سے پکی محبت عطا فرما دے اور ہمیں عاشق بنا دے۔
وَآخِرُ دَعْوَانا اَنِ الْحَمْدُ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ
2nd Dec, 2020
The Quality of a Believer

Hadhrat Ibn Umar radhiallah anhu relates a Hadeeth which describes the qualities of a believer. And it is the case that a true believer will be full of qualities. From among all these qualities there is one quality that Allah likes the most. Now imagine how great this quality mentioned in this Hadeeth must be. This quality is to keep one’s clothing clean and pure, and to be content with little. And this is the Sunnah of Allah’s Messenger sallallahu alayhi wa sallam.

Clothing has great significance and relevance to our Deen, our Iman and our Akhirah. It is not a minor thing and a person cannot just wear what the feel. Allah’s Nabi sallallahu alayhi wa sallam has informed us of so much through his blessed Sunnah. There are actions from the Sunnah that take a person directly to Jannah, and for sure those things that are like by Allah will take a person to Paradise.

It is not the beauty of a believer that he wears anything that he feels like. The excellence of a believer is that he chooses for himself those things that were the preference of Allah’s Nabi sallallahu alayhi wa sallam. And it was the preference of Allahs Nabi sallallahu alayhi wa sallam that a person should keep his clothing pure and clean.

Now there are people in all walks of life and social circumstances. Some are rich and some are poor. And it is not the case that someone is superior if they wear more expensive clothes. This quality refers to the clothes being clean and not expensive. Even the poorest of persons can clean his clothes. A person should not wear dirty clothes just because they are poor. The standard set by Allah’s Messenger sallallahu alayhi wa sallam was that the clothes should be clean. We all have soap and water in our homes, and if we don’t have a washing machine, then we do have hands. A person should change their clothes at least within three days, and if a person sweats then earlier than that. Otherwise a person should at least change twice a week.

Clean Clothes Important For All

The next thing mentioned in the Hadeeth is to be content with little. In other words it is not important that clothing be expensive. Allah does not look at the price of a person’s clothes. If that was the case the poor would never be able to compete with the rich in deeds, but that is not the case. Our Prophet sallallahau alayhi wa sallam came as a great blessing for the poor.

This Hadeeth is for both men and for women. Among women it is common to be conscious of clothing. Some women will not go to a gathering just in case other women look down upon them because of what they might be wearing. This way of thinking is wrong and a person should not think like this. There is no competition when it comes to clothing. We should dress in accordance with the wealth that Allah has given us and there is no shame in that. What is important is that clothes should be clean and not smelly. They should not be stained with food etc. The price is irrelevant, in fact be content with little. If you can afford to buy clothing for ten pounds then do so and if you can only afford to buy something for two pounds then be content upon that. There is no greater reward for one than the other.

A person should be happy in his clean clothes whether someone else likes it or not because it is liked by Allah’s beloved Habeeb sallallahu alayhi wa sallam. Subhanallah, to wear clean clothes is a great thing. It is stated in another Hadeeth that the Prophet sallallahu alayhi wa sallam did not like dirty clothes.

It is common that when we go out we wear nice clean clothes but when we are at home we are not clean. Among women, this is even more common and there will be a big difference in the home and what they wear when they go out. A person should maybe wear some other clothes for jobs like cleaning and cooking, or wear an overall to avoid making the clothes dirty. So we should all take care in keeping our clothes clean as it is one of thos qualities most like by Allah.

Now, it is the quality of a believer that he prays Tahajjud, prays Salaah, recites the Qur’an, but from all these Allah likes a clean person the most, whether his clothes are cheap or not. Subhanallah.

We recite Durood shareef, sit and do the tasbeeh of Allah and do the dhikr of Allah, so it is important we also wear clean clothes for these blessed actions. I pray that Allah grants us the Sunnahs of His Habeeb sallallahu alayhi wa sallam and gives us the taufeeq to adopt them in our lives. And grant us the immense love for the Sunnahs of His Messenger sallallahu alayhi wa sallam.

وَآخِرُ دَعْوَانا اَنِ الْحَمْدُ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ

2nd Dec, 2020
margin-right:-5px